India

سوال # 163262

حضرت مفتی صاحب! عورت کو اگر موئے زیر ناف صاف کرنے میں کریم سے پریشانی اس قدر ہوتی ہے کہ جلد جھلس جاتی ہو اور بہت زیادہ تکلیف ہوتی ہو اور جلد جل جاتی ہو تو کیا عورت کو اس مجبوری میں بلیڈ کا استعمال کی گنجائش ہے یا نہیں؟

Published on: Jul 18, 2018

جواب # 163262

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1104-936/N=11/1439



عورت کے لیے موئے زیر ناف کی صفائی کے لیے بال صفا کریم یا صابن استعمال کرنا صرف افضل وبہتر ہے؛ تاکہ اس کی شرمگاہ کے آس پاس کا حصہ نرم رہے، واجب وضروری نہیں ہے؛ اس لیے اگر کسی عورت کو بال صفا کریم یا صابن سے الرجی ہوتی ہو تو وہ مجبوری میں بلیڈ یا مشین استعمال کرسکتی ہے ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات