India

سوال # 157408

ہماری کوئی اولاد نہیں ہے اور میری بیوی اگلے دو سال تک حمل کے لیے تیار نہیں ہے، جب کہ صحت کا کوئی مسئلہ نہیں ہے تو کیا یہ حلال ہے یا حرام؟

Published on: Jan 21, 2018

جواب # 157408

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:371-334/D=4/1439



اولاد اللہ تعالیٰ کی نعمت ہے دنیا میں ذکر خیر باقی رہنے کا ذریعہ ہوتا ہے اور اس کے ذریعہ اعمال خیر اور دعا وغیرہ جو وجود میں آتی ہیں ان سب کا ثواب والدین کو بھی پہنچتا ہے، نسل انسانی کے آگے قائم ودائم رہنے کے لیے اللہ تعالیٰ نے مرد وعورت کے درمیان رشتہ ازدواج کا سلسلہ قائم فرمایا۔ اور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: ”تزوجوا الولود الودود فإني مکاثر بکم الأمم“ یعنی زیادہ محبت کرنے والی اور بچہ جننے والی عورت سے نکاح کرو کیونکہ کل قیامت میں میں اپنی امت کے افراد کی زیادتی سے دوسری امتوں پر فخر کروں گا۔



لہٰذا بلاکسی مجبوری کے ضبط ولادت کرنا منشأ شارع اور شریعت کے خلاف ہے۔ اور بیوی کا حمل کے لیے بلاوجہ تیار نہ ہونا باعث گناہ ہے، اگر بیوی کی صحت خراب نہیں ہے اور اسے دوسرا کوئی مانع بھی نہیں ہے تو اسے گریز کا راستہ اختیار نہیں کرنا چاہیے، حضرت زکریا علیہ السلام نے اولاد کے لیے دعا فرمائی تھی ”رَبِّ لَا تَذَرْنِی فَرْدًا وَأَنْتَ خَیْرُ الْوَارِثِینَ“ 



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات