Pakistan

سوال # 257

میں ایک نیا گھر بنا رہا ہوں۔ اس میں ایک روم ہے جو ذرا چھوٹے سائز کا ہے۔ ہماری فیملی چھوٹی ہونے کی وجہ سے یہ روم فی الحال استعمال میں نہیں رہے گا۔ ہمارے تبلیغی جماعت کے اکابرین فرماتے ہیں کہ گھر میں ایک جگہ نماز، ذکر، تعلیم، مشورہ اور دیگر اعمال خیر کے لیے ہونی چاہیے۔ اس روم کے لیے میں کیا نیت کروں؟اگر میں مسجد کی نیت کرلوں تو مستقبل میں اگر کبھی ہم اس کو استعمال کرنے کی ضرورت محسوس کریں اور اس میں مذکورہ بالا مقاصد کی جگہ رہائش کا ارادہ کرلیں تو کیا ایسا کرنا درست ہوگا؟یا میں کوئی اور نیت کروں؟ براہ کرم، واضح جواب سے نوازیں۔ اگر قرآن و حدیث سے کوئی حوالہ لکھیں تو عربی کے ساتھ اس کا ترجمہ بھی لکھ دیں۔ جزاک اللہ! والسلام

Published on: Apr 21, 2007

جواب # 257

بسم الله الرحمن الرحيم

(فتوى: 14/د=10/د)


 


کسی کمرہ کو نماز، ذکر، تعلیم کے لیے مخصوص کرلینا بہت اچھا ہے، اس سے پورے گھر میں برکت رہے گی، ان شاء اللہ۔


 


جب اس کمرہ کو مسجد بنانا آپ کا مقصد نہیں ہے کیونکہ مسجد ہمیشہ ہمیش کے لیے ہوجاتی ہے، تو مسجد کی نیت نہ کریں، صرف نماز تلاوت تعلیم وغیرہ کے لیے جگہ مخصوص و متعین کرنے کی نیت کریں۔ آپ جب اس میں تبدیلی کرنا چاہیں گے یا دوسرے استعمال میں لانا چاہیں گے تو لاسکیں گے۔ کوئی حرج نہ ہوگا۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات