Pakistan

سوال # 169709

کیا فرماتے علماء کرام درجہ ذیل مسلہ کے بارے میں کہ کسی شحض نے مدرسہ کیلئے زمیں وقف کیا ،اب وہی موقوفہ زمین دوسری زمین میں بدل کرسکتی ہے یا نہیں؟یا یہ زمین موقوفہ فروخت کر کے اس کی جگہ دوسرا خریدی مدرسے کیلئے تو یہ ٹھیک ہے ۔

Published on: Apr 18, 2019

جواب # 169709

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:854-742/L=8/1440



وقف کے تام اور لازم ہوجانے کے بعد موقوفہ چیز واقف کی ملک سے نکال کر اللہ کی ملک میں داخل ہوجاتی ہے ؛ لہٰذا خود واقف یا کسی اور کے لیے اس زمین کو بدلنا یا اس کو فروخت کرنا جائز نہیں۔



(فإذا تم ولزم لا یملک ولا یملک ولا یعار ولا یرہن)( الدر المختار) وفی رد المحتار: (قولہ: لا یملک) أی لا یکون مملوکا لصاحبہ ولا یملک أی لا یقبل التملیک لغیرہ بالبیع ونحوہ لاستحالة تملیک الخارج عن ملکہ.( الدر المختارمع رد المحتار:۶/۵۳۹ط:زکریا دیوبند)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات