Indian

سوال # 156926

مسجد میں مدینہ اور مکہ کے تصویر لگانا کیساہے ؛ اور اگر ممبر پر یعنی جہاں امام صاحب نماز پڑھاتے ہیں، اس کے آگے تصویر لگانہ کیسا ہے ؟

Published on: Dec 27, 2017

جواب # 156926

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:251-293/sd=4/1439



قبلہ کی جانب دیوار میں نقش ونگار کرنے کو فقہاء نے مکروہ لکھا ہے ، اور اس کی وجہ یہ بیان کی کہ اس سے مصلی کا ذہن منتشر ہوگا، نماز میں خشوع خضوع نہ رہے گا، اس سے معلوم ہوا کہ مسجد میں ایسی جگہ مدینہ یا مکہ یا کسی غیر ذی روح کی تصویر لگانا، جس پر نمازیوں کی نماز کی حالت میں نظر پڑتی ہے ؛ مکروہ ہے ، اس سے خشوع خضوع جو نماز کی روح ہے فوت ہوجاتا ہے ۔ ولا باس بنقشہ خلا محرابہ فإنہ یکرہ لأنہ یلہی المصلی وظاہرہ أن المراد بالمحراب جدار القبلة (الدر: ۴۳۱/۲، قبیل مطلب: فی أفضل المساجد، ط: زکریا) 



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات