عقائد و ایمانیات - قرآن کریم

India

سوال # 7240

حضرت میں آپ سے یہ پوچھنا چاہتا ہوں کہ سورہ یسین میں ? وخشی الرحمن? کا لفظ استعمال ہوا ہے اس کی تسلی بخش تشریح فرماویں۔دوسری جگہ پر ?الذین یخشون ربہم? آیا ہے۔ بہت جگہ ربہم آیا ہے کہ وہ لوگ جو رب سے ڈرتے ہیں مگر سورہ یسین میں کہا کہ وہ لوگ جو اپنے رحمن سے ڈرتے ہیں۔ رحمن سے ڈرنے کا کیا مطلب ہے؟ کیوں کہ رحمن کا مطلب تو رحم و کرم ہے۔ بہت دنوں سے یہ بات ہمارے ذہن میں ہے ۔ برائے کرم آپ تفصیل سے بتائیں۔

Published on: Oct 18, 2008

جواب # 7240

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 1111=965/ل


 


رحمن سے ڈرنے کا حکم اس وجہ سے آیا ہے کہ کہیں آدمی اللہ کے رحیم ومہربان ہونے کی وجہ سے جری نہ ہوجائے کیونکہ اللہ جس طرح رحمن ہے اسی طر ح ?منتقم? بدلہ لینے والا ?قہار? زور والا بھی ہے، قال البیضاوي: ?وَخَشِیَ الرَّحْمٰن بِالْغَیْبِ? وخاف عقابہ قبل حلولہ ومعاینة أحوالہ أو في سریرتہ ولال یغتر برحمتہ فإنہ کما ہو رحمان منتقم قہار (بیضاوي شریف: ۲/۲۷۸) اور تفسیر کبیر میں ہے کہ اللہ کے لیے دو نام مختص ہیں، ایک اللہ دوسرے رحمن اور خشی الرحمن کا حاصل یہ ہے کہ اللہ کے جلال کو دیکھتے ہوئے آدمی مایوس نہ ہوجائے اور اللہ کے رحمان ہونے پر نظر کرتے ہوئے آدمی مطمئن نہ ہوجائے بلکہ آدمی کو امید و خوف کے درمیان زندگی بسر کرنی چاہیے: وتکملة اللطیفة: وہي أن من أسماء اللہ اسمین یختصان بہ ھما اللہ والرحمن کما قال تعالی: ?قُلْ اَدْعُوا اللّٰہَ اَوِ ادْعُوا الرَّحمٰن?․․․․ وقال ہہنا وخشی الرحمن یعنی مع کونہ ذا ہیبة لا تقطعوا عنہ رجاء کم ومع کونہ ذا رحمة لا تأمنوہ (تفسیر کبیر: ۶۲/۴۲)


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات