عقائد و ایمانیات - قرآن کریم

Saudi Arabia

سوال # 146883

میں جب بھی قرآن پڑھتا ہوں تو ہمیشہ یہ خیال آتا ہے کہ نعوذ باللہ اُس پر پیر رکھوں۔
براہ کرم صحیح جواب سے رہنمائی فرمائیں کہ کیا مجھے کوئی گناہ تو نہیں ہوگا؟

Published on: Dec 22, 2016

جواب # 146883

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 200-177/N=3/1438



 



یہ شیطانی وسوسہ ہوتا ہے، اس سے پریشان ہونے کی ضرورت نہیں، غیر اختیاری وساوس پر گناہ نہیں ہوتا؛ البتہ آئندہ جب کبھی اس طرح کا خیال آئے تو آپ یہ پڑھ لیا کریں: أعوذ باللہ من الشیطان، آمنتُ باللہ ورُسُلہ، انشاء اللہ آہستہ آہستہ اس طرح کے وساوس کا سلسلہ ختم ہوجائے گا۔ عن أبي ھریرة(رض) قال: قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم: إن تجاوز اللہ عن أمتي ما وسوست بہ صدورھا ما لم تعمل بہ أو تتکلم، متفق علیہ (مشکاة المصابیح، کتاب الإیمان،باب فی الوسوسة، الفصل الأول، ص ۱۸، ط: المکتبة الأشرفیة دیوبند)،یسن لہ أن یستعیذ ثم یقول: آمنت باللہ ورسلہ (مرقاة المفاتیح شرح مشکاة المصابیح، کتاب الإیمان،باب فی الوسوسة، الفصل الأول،۱: ۲۲۸، ط: دار الکتب العلمیة بیروت)۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات