متفرقات - تصوف

India

سوال # 160417

حضرت، میں ایک لڑکی سے تعلق رکھتا ہوں پر جسمانی تعلق نہیں۔ سگریٹ کا بھی اہتمام ہے، اور گندی فلمیں بھی دیکھتا ہوں، روز نیت کرتا ہوں کہ چھوڑ دوں لیکن چھوٹتا ہی نہیں ہے، اور لڑکی کو چھوڑنے کے لئے کہتا ہوں تو رونے لگتی ہے، میں بہت پریشان ہوں۔

Published on: Apr 19, 2018

جواب # 160417

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:902-788/H=8/1439



روزانہ کچی نیت کرتے ہیں گناہوں کو چھوڑنے کے لیے نیت پکی اور توبہ سچی کرنے کی ضرورت ہے، تازہ غسل کرکے نئے یا دھلے ہوئے کپڑے پہن کر دو رکعت نفل توبہ کی نیت سے پڑھیں اور سلام پھیرکر ایک تسبیح درود شریف کی اور دوسری استغفار کی اور تیسری پھر درود شریف کی پڑھ کر اللہ پاک سے سچی پکی توبہ کریں اور اتنا پختہ عزم کرلیں کہ خواہ جان ہی نکل جائے مگر آئندہ اس لڑکی سے گفتگو نہیں کروں گا اور گندی بلکہ کسی بھی طرح کی فلمیں نہیں دیکھوں گا، اور سگریٹ ہرگز نہ پیوں گا اور اس کے بعد اپنی دس دن کی آمدنی غرباء فقراء مساکین پر خرچ کردیں ،اگر خدانخواستہ اُس کے بعد گناہ ہوجائے تو جب تک مذکورہ بالا کام انجام نہ دے لیں اس وقت تک کھانا بالکل نہ کھائیں پھر کبھی گناہ ہوجائے تو پھر کھانا کھانے سے پہلے ان تمام کاموں کا کرنا اپنے اوپر لازم کرلیں، ان شاء اللہ کچھ ہی عرصہ میں کایا پلٹ ہوجائے گی اور گناہوں کی گندگی سے بچ کر پریشانیاں ختم ہوجائیں گی۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات