متفرقات - تصوف

India

سوال # 155366

مفتی صاحب ،حضرت، اسلام میں تصوف کی کیا حیثیت ہے ؟ قرآن و سنت کی روشنی میں وضاحت فرمائیں۔

Published on: Nov 11, 2017

جواب # 155366

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:66-47/D=2/1439



قرآن میں ارشاد ہے قَدْ أَفْلَحَ مَنْ زَکّٰہَا یعنی وہ شخص فلاح یاب ہوا جس نے نفس (قلب) کا تزکیہ کرلیا، تزکیہ کا مطلب ہے اخلاق رذیلہ: کبر، حسد، حرص، حب دنیا، غضب، شہوت، ریا وغیرہ دور کرکے اخلاق فاضلہ (حمیدہ) اس میں پیدا کرنا یعنی تواضع، صبر شکر، قناعت، اخلاص، عضب وہ شہوتمیں اعتدال یاخلافِ شرع جگہ استعمال کرنے سے اجتناب وغیرہ صفات کا پیدا کرنا۔ اس کے لیے تدبیر، علاج یا مجاہدہ وغیرہ جس علم کے ذریعہ کیا جاتا ہے اسے تصوف، تزکیہ، فقہ باطن، علم قلب اور احسان کہتے ہیں اس علاج وتدبیر کے لیے صحبت صالحین نہایت ضروری ہے جس کے لیے قرآن میں فرمایا گیا یَا أَیُّہَا الَّذِینَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّہَ وَکُونُوا مَعَ الصَّادِقِینَ دوسری لفظوں میں یہ کہ جس طرح قرآن میں نماز ادا کرنے زکاة دینے روزہ رکھنے کا حکم کیا گیا اسی طرح صبر وشکر قناعت اختیار کرنے اورخوف وخشیت الٰہی پیدا کرنے کی تاکید کی گئی ہے؛ لہٰذا ان باتوں کا پیدا کرنا بھی فرض ہوا، جس علم میں ان چیزوں کے پیدا کرنے کا طریقہ بتلایا گیا ہو اسی کو تصوف کہتے ہیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات