معاشرت - طلاق و خلع

pakistan

سوال # 164587

کیا طلاق کے مسائل سوچتے ہوئے بغیر کچھ سوچے سمجھے طلاق کا لفظ منہ سے نکل جائے تو طلاق واقع ہو جاتی ہے ؟ مثلا کسی دوست نے اپنی بیوی کو طلاق دے دی تو آفمی سوچ رہا ہے کہ اس طرح طلاق ہو جاتی ہو اور طلاق کا لفظ منہ سے صرف طلاق نکلا ۔

Published on: Sep 12, 2018

جواب # 164587

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1416-1210/D=12/1439



مذکورہ طریقے پر طلاق کے بارے میں سوچنا اور زبان سے طلاق کا لفظ نکل جانے سے بیوی پر کسی قسم کی طلاق نہیں پڑتی، طلاق واقع ہونے کے لیے قصد وارادہ سے لفظ کا نکلنا اور بیوی کی طرف نسبت کا ہونا ضروری ہے نسبت خواہ صراحةً ہو یا دلالةً․



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات