معاشرت - طلاق و خلع

india

سوال # 148168

کیا فرماتے ہیں مفتیانِ عظام بیچ اس مسئلہ کے کہ ایک شخص نے اپنی زوجہ کو طلاقِ رجعی دی اور عدت بھی پوری ہوچکی ہے ۔اب دوسری جگہ شادی کرنا چاہتے ہیں تو اِن لوگوں کا تقاضہ ہے کہ اُس پہلے رشتے کو مکمل ختم کرلو،پوچھنا یہ ہے کہ جس عورت کو طلاق رجعی دیدی گئی اور عدت بھی پوری ہو چکی اس کو باقی کی طلاقیں دی جا سکتی ہیں کیا؟

Published on: Feb 6, 2017

جواب # 148168

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 518-518/M=5/1438



جس عورت کو طلاق رجعی دیدی گئی ہو اور عدت کے اندر شوہر کی جانب سے قولاً یا فعلاً رجوع کرنا نہ پایا گیا ہو تو عدت مکمل ہونے پر عورت بائنہ ہوگئی اس کے بعد عورت دوسری جگہ شادی کرسکتی ہے، عدت ختم ہوجانے کے بعد مزید طلاق دینا لغو اور فضول ہے وہ طلاق واقع نہیں ہوتی۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات