عبادات - طہارت

India

سوال # 156356

وضو کے فرائض میں سے ایک فرض ہے دونو ں پیر ٹخنوں سمیت دھونا ۔سوال یہ ہے کہ پیر دھوتے وقت سیدھے ہاتھ سے پیر دھونا جس میں شہادت کی انگلی بھی استعمال ہو کیادرست نہیں ہے ؟ ہوا یوں کہ آج میں جب مسجد میں مغرب کی نماز کے لیے وضو کر رہا تھا تب ایک حضرت نے مجھے اپنا دایا پیر سیدھے ہاتھ سے دھوتے ہوئے دیکھا تو کہنے لگے یہ درست نہیں ہے کیونکہ شہادت کی انگلی سے پیر نہیں دھوں سکتے ۔ آپ میری اس میں رہنمائی فرمائیں۔

Published on: Dec 14, 2017

جواب # 156356

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:239-203/M=3/1439



اس بارے میں کوئی صریح جزئیہ نہیں ملا، البتہ پیر کی انگلیوں میں بائیں ہاتھ کی خنصر سے خلال کو مستحب لکھا ہے، اس سے معلوم ہوتا ہے کہ دھونے میں بھی ادب یہی ہے کہ دونوں پیر بائیں ہاتھ سے دھوئے جائیں۔ وفي الرجلین أن یخلل بخنصر یدہ الیسری خنصر رجلہ الیمنی ویختم بخنصر رجلہ الیسری (ہندیہ: ۱/۷۔ الفصل الثاني في سنن الوضوء)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات