India

سوال # 4158

میں اسٹوک مارکیٹ میں ڈیلر کی حیثیت سے کام کرنا چاہتا ہوں جس میں گاہکوں کی طرف سے میں اسٹوک (حصص) خریدوں گا اور بیچوں گا۔یہ اسٹوک کچھ شراب کی کمپنیوں اور حلال بزنس کرنے والی کمپنیوں کا بھی ہوسکتاہے ، اس کے علاوہ ادئیگی میں تاخیر ہونے کی وجہ سے میں اپنی کمپنی کی طرف سے گاہکوں پر سودکا چارج بھی لگانا پڑے گا۔ براہ کرم، مشورہ دیں کہ کیا یہ کام جائز ہے؟

Published on: Jun 16, 2008

جواب # 4158

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 1083=791/ ھ


 


جب کہ لازماً آپ کو شراب اور سودی معاملات کرنے ہی پڑیں گے تو ایسی ملازمت جائز نہیں اور ہمارا مشورہ بھی یہی ہے کہ ہرگز اس کو اختیار نہ کریں۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات