India

سوال # 3033

میں جاننا چاہتا ہوں کہ کیا شیئر اور انوسٹمنٹ (روپئے لگانا) اسلام میں جائز ہے؟ اور کس طرح سے یہ جائز ہے(طریقہ کیا ہوگا)؟ (۲) کیا ہاؤسنگ لون (گھر بنانے کے لیے بینک سے قرض لینا) ذاتی لون، کار لون وغیرہ لینا اسلام میں جائز ہے؟ اگر ہاں! تو کن حالات میں؟

Published on: Mar 10, 2008

جواب # 3033

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 228/ ب= 213/ ب


 


اگر شیرز کمپنی میں جائز و حلال کاروبار ہوتا ہے، سودی کاروبار یا اور کوئی ناجائز کاروبار نہیں ہوتا اور کمپنی سال دوسال تک جائز کارو بار میں پیسے لگاکر شرکتِ مضاربت کے طور پر منافع تقسیم کرے تو اس میں کوئی حرج نہیں اس طرح کسی بھی جائز کاروبار میں پیسے لگانا درست ہے۔


(۲) بینک سے ہاوٴسنگ لون لینا، ذاتی لون، کارلون لینا یہ سب جائز نہیں، ان صورتوں میں سود دینا پڑتا ہے، جس طرح سود لینا ناجائز و حرام ہے اسی طرح سود دینا بھی ناجائز و حرام ہے۔ البتہ ایسا غریب و محتاج آدمی جو مضطر و مجبور ہو، بے عزتی ہورہی ہو تو اس کے لیے بقدر ضرورت بینک سے لون لینے کی گنجائش ہے۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات