India

سوال # 168707

میں شراکت داری کی شکل میں ادویات کا کاروبار کرنا چاہتا ہوں،اور میں نے اپنے ساتھی کے ساتھ مندرجہ ذیل معاہدے پر اتفاق کیا ہے
(۱) :ہر ساتھی کی طرف سے فرم میں سرمایہ کا حصہ برابر ہونا چاہئے .
(۲) خالص منافع کو شراکت داروں کے درمیان برابر طور پر تقسیم کیا جائے گا اور خالص نقصان کو شراکت داروں کے درمیان برابر تقسیم کیا جائے گا.
(۳) پارٹنرشپ کو فراہم کردہ خدمات کے لئے کسی بھی پارٹنر کو کوئی تنخواہ نہیں ملے گا،
(۴) شراکت دار شراکت داری کے کاروبار کے انتظام میں شریک حقوق ہیں ہر پارٹنر کاروبار کو برابر وقت وقف کرے گا.
(۵) شراکت داری کی طرف سے ، دوسرے پارٹنر کی رضامندی کے بغیر نہ ہی شراکت داروں کو کسی سے پیسہ قرض لینے یا کسی کو پیسہ قرض دینے کی اجازت ہے .
(۶) پارٹنرشپ کے تمام فنڈز اس کے نام میں جمع کیے جائیں گے جیسا کہ شراکت داروں کی طرف سے نامزد کیا گیا ہے .
(۷) پارٹنروں کے معاہدے پر شراکت کسی بھی وقت منحصر ہوسکتی ہے .
(۸) شراکت دار کا نام کاروباری دیگر اثاثوں کے ساتھ فروخت کیا جائے گا.
(۹) شراکت داری کے کاروبار کی اثاثوں کو مندرجہ ذیل حکم میں استعمال کیا جائے گا اور تقسیم کیا جائے گا:تمام شراکت داری کی ذمہ داریوں کی ادائیگی اور اخراجات اور ذمہ داریوں کو ادائیگی یا فراہم کرنے کے لئے .شراکت داروں کے آمدنی اکاؤنٹس کو برابر کرنے کے لئے .
(۱۰) کسی بھی پارٹنر کی موت پر، زندہ رہنے والا ساتھی شراکت داری کو خریدنے یا پارٹنرشپ کے کاروبار کو ختم کرنے کا حق رکھتے ہیں.
(۱۱) تمام شراکت دار اسلامی فقہ کے قواعد پر عمل کریں گے .
میرا سوال یہ ہے کہ
۱- میں مندرجہ بالا معاہدے کے مطابق کاروبار کر سکتا ہوں؟
۲- اس قسم کے معاہدے کے لئے کتنے گواہ ضروری ہیں؟

Published on: Feb 26, 2019

جواب # 168707

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:557-454/N=6/1440



(۱): معاہدہ کی جملہ دفعات صحیح ودرست اور مطابق شریعت ہیں؛ البتہ دفعہ: ۷اور ۸مجھے سمجھ میں نہیں آئی؛ لہٰذا اس کی وضاحت کرکے دوبارہ حکم معلوم کریں۔



(۲):شراکت داری کے معاہدہ پر گواہ بنانا ضروری نہیں ہے؛ البتہ بہتر ہے۔ اور گواہ کم از کم ۲/ مسلمان، عاقل وبالغ اور دین دار مرد ہوں یا اس طرح کا ایک مرد اور اس طرح کی دو عورتیں ہوں۔ اور اگر دو چار زیادہ ہوجائیں تو کچھ حرج نہیں۔



ویندب الإشھاد علیھا، وذکر محمد کیفیة کتابتھم فقال: ھذا ما اشترک علیہ فلان وفلان اشتراکاً علی تقوی اللہ تعالی وأداء الأمانة، ثم یبین قدر رأس مال کل منھما الخ (رد المحتار، کتاب الشرکة، ۶: ۴۷۵، ط: مکتبة زکریا دیوبند)۔



ونصابھا لغیرھا من الحقوق سواء کان الحق مالا أو غیرہ کنکاح وطلاق ووکالة ووصیة الخ رجلان…أو رجل وامرأتان الخ (الدر المختار مع رد المحتار، کتاب الشھادات، ۸: ۱۷۸، ط: مکتبة زکریا دیوبند)۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات