عبادات - صوم (روزہ )

Jharkhand

سوال # 163668

اگر کوئی شخص جان بوجھ کر روزہ نہ رکھے اس پر کیا حکم ہے کہ وہ صرف قضا کرے یا کفارہ بھی ادا کرے ؟

Published on: Aug 2, 2018

جواب # 163668

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1148-850/sn=11/1439



اگر روزہ رکھا ہی نہیں ہے تو صرف ایک کے بدلے ایک کی قضا کرنی ہے، کفارہ واجب نہیں ہے؛ لیکن جان بوجھ کر روزہ نہ رکھنا انتہائی محرومی اور شقاوت کی بات ہے، ایک حدیث میں ہے: من أفطر یومًا من رمضان من غیر رخصة ولا مرض لم یقض عنہ صوم الدہر کلہ وإن صامہ رواہ أحمد والترمذي وأبوداوٴد (مشکاة: ۲۰۱۳) یعنی جو شخص بلا کسی عذر کے ایک دن بھی ماہِ رمضان کا روزہ چھوڑے گا تو پوری زندگی کے روزے بھی اس کے ثواب کی تلافی نہ کرسکیں گے۔ اگر کسی سے قصدا روزہ نہ رکھنے کا گناہ صادر ہوگیا ہے تو اسے چاہیے کہ اللہ تعالیٰ کے سامنے روئے گڑگڑائے، پشیمانی کا اظہار کرے اور جتنی جلدی ہوسکے چھوڑے ہوئے روزوں کی قضا کرلے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات