عبادات - صلاة (نماز)

India

سوال # 9713

 تشبک الأصابیع قبل الصلاة وبعدھا وقبلہا یکساں حرام ہے یا مکروہ بالدلیل تحریر فرمائیں، سعودی علماء کے فتاوے نیٹ پر موجود ہیں وہ صرف بالحدیث منتظر الصلاة کے لیے حرام بتاتے ہیں۔

Published on: Jan 11, 2009

جواب # 9713

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 2377=2121/ د


 


قبل صلات تشبیک الأصابع مکرو ہ ہے، البتہ نماز کے بعد مکروہ نہیں ہے، اور قبل صلاة مکروہ کی علت منتظر صلاة کے حکم میں ہونا ہے، نہ کہ بعد صلاة: کما في حاشیة الطحطاوي لما روی أحمد وأبوداود وغیرھما مرفوعًا إذا توضأ أحدکم فأحس وضوء ہ ثم خرج عامدًا إلی المسجد فلا یشبک بین یدیہ فإنہ في الصلاة وإذا کان منتظرًا لھا بالأولی والذي یظہر أنہا تحریمیة للنہي المذکور کما في البحر وأما إذا انصرف من الصلاة فلا بأس بہ (طحطاوي قدیمی: ۱۹، مطبوعہ کراچی پاکستان)


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات