عبادات - صلاة (نماز)

india

سوال # 175733

اگر امام نے قدافلح من زکاھا کے بجائے قد افلح من دساھا پڑھا تو کیا اس سے نماز ہوجا ئے گی یا نہیں؟

Published on: Jan 16, 2020

جواب # 175733

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 496-377/B=05/1441



” قد أفلح من زکّاہا “ کی جگہ ” قد أفلح من دسّاہا “ پڑھنے سے معنی بگڑ گئے جو کہ مقصودِ قرآن کے خلاف ہے؛ اس لئے صورت مسئولہ میں نماز فاسد ہو جائے گی۔ ومنہا الخطأ في التقدیم والتّأخیر ۔ إن قدّم کلمةً علی کلمة أو أخّر ․․․․․․ إن تغیّر المعنی نحو أن یقرأ: ” إنّ الأبرار لفي جحیم وإنّ الفجّار لفي نعیم “ فأکثر المشایخ علی أنّہا تفسُد ، وہو الصّحیح ہکذا في الظہیریّة ۔ (الفتاوی الہندیة، کتاب الصّلاة، الفصل الخامس في زلّة القاري، ۱/۱۳۸، اتحاد دیوبند)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات