عبادات - صلاة (نماز)

India

سوال # 17494



میری
عمر اڑتیس سال (قمری حساب)سے ہے۔ میری بہت عرصوں کی نمازیں قضا ہوئی ہیں۔ تو آپ سے
گزارش ہے کہ کم وقت میں اچھی طرح قضائے عمری نماز ادا کرنے کا طریقہ تجویز فرماویں۔



Published on: Nov 26, 2009

جواب # 17494

بسم الله الرحمن الرحيم



فتوی(ل):1851=1478-12/1430



 



شریعت
میں کوئی ایسی نماز نہیں ہے جو قضا شدہ تمام نمازوں کا کفارہ بن سکے،عوام میں
قضائے عمری کے نام سے جو نماز مشہور ہے ہ بے اصل ہے۔ اس لیے اگر آپ کی کافی عرصے
سے نماز قضا ہوئی ہیں، تو اس سے فراغ ذمہ کی یہی صورت ہے کہ آپ ان تمام نمازوں کا
اندازہ کریں اور اگر شبہ ہو تو اکثر کا اعتبار کریں، مثلاً اگر آپ کو یہ شبہ ہو کہ
میری دو سال کی نماز قضاء ہوئی ہے یا تین سال کی تو آپ تین سال کا اعتبار کریں، نیز
قضاء میں پانچ نمازوں کے ساتھ وتر کو بھی شامل کرلیں اور جس طریقے سے بھی قضاء
نماز ادا ہوسکے ادا کریں اور آسان طریقہ یہ ہے کہ ہرنماز کے ساتھ ایک دو قضاء نماز
کو بھی شامل کرلیں اور قضاء کرتے وقت یہ نیت کریں کہ میں مثلاً پہلی یا آخری ظہر کی
نماز ادا کررہا ہوں۔




واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات