عبادات - صلاة (نماز)

Pakistan

سوال # 171301

حضرت آپ سے یہ عرض ہے کہ یہ بتائیں کہ کیا اقامت اس طرح پڑھ سکتے ہیں یا نہیں کہ پہلے چار کلمے اکٹھے پڑھے اللہ اکبر اللہ اکبر اللہ اکبراللہ اکبر بغیر وقف کئے پھر دو کلمے پڑھے بغیر وقف کئے اشھدان لا الہ الااللہُ اشھد ان لا الہ الااللہ یعنی الااللہُ میں ساتھ ضمہ بھی ملا کر بغیر وقف کے پڑھا پہلے والے کلمے میں پھر اسی طرح اشھد ان محمد رسول اللہِ اشھد ان محمد رسول اللہ یعنی رسول اللہِ پہلے والے کلمے میں کسرہ کے ملا کر پڑھا پھر اسی طرح حی علی الصلوةِ حی علی الصلوة یعنی الصلوةِ میں کسرہ کو ملا کر پڑھا پھر اسی طرح حی علی الفلاحِ حی علی الفلاح یعنی الفلاحِ میں کسرہ کو ملا کر پڑھا پھر اسی طرح قد قامة الصلوةُ قد قامة الصلوة یعنی الصلوٰةُ میں ضمہ کو ملا کر پڑھا پھر دو کلمے اللہ اکبر اللہ اکبر پھر لاالہ الا اللہ اب یہاں ایک دو احباب نے یہ کہا ہے ایسے نہیں پڑھنا چاہئے اس طرح پڑھنے سے نہیں کے معنی بن جاتے ہیں مجھے یہ سمجھ نہیں آئی کہ نہیں کے معنی کیسے بن جاتے ہیں حضرت آپ مجھے تفصیل بتائیں اور اس بات کوبھی سامنے رکھیں کہ حدیث کے الفاظ اذا اذنت فترسل واذا اقمت فاحدر اس بات کو سامنے رکھ کر تفصیل سے بتائیں یا کہ وقف سے ہی پڑھی جانی چائیے اور جب وقف سے پڑھوں تو مجھ سے تھوڑا طوال ہو جاتا ہے تو طوال بھی اتنا ہے کہ اذان سے باالکل جدا ہے اور مشابہ نہیں مہربانی کر کے بتا دیں کہ کونسی بات ٹھیک اور کونسی مناسب نہیں جزاکم اللہ خیراکثیرا

Published on: Jun 27, 2019

جواب # 171301

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 1041-850/D=10/1440



حدیث میں ہے الاذان جزمٌ والاقامة جزمٌ پس اذان کے ہر کلمہ پر وقف کیا جائے گا اور جزم سے پڑھا جائے گا جس طرح آپ نے لکھا ہے وہ عام قاعدہ وصل کے اعتبار سے تو درست ہے لیکن خصوصیت کے ساتھ اذان و اقامت میں وصل کا یہ قاعدہ جاری نہ ہوگا حدیث مذکور کی بنا پر۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات