عبادات - صلاة (نماز)

India

سوال # 165828

اگر ظہر کی فرض نماز سے پہلے چار رکعت سنت چھوٹ جائے تو کیا اس کو فرض نماز کے بعد پڑھنا درست ہے؟

Published on: Oct 29, 2018

جواب # 165828

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 178-111/B=2/1440



ظہر کی سنن موٴکدہ قبلیہ کی سنّیت ، جماعت ہو جانے سے ختم نہیں ہوتی؛ بلکہ جماعت کے بعد بھی اُن کی ادائیگی مسنون رہتی ہے؛ اس لئے آپ جماعت کے بعد وقت کے اندر انہیں ضرور ادا کریں۔ بخلاف سنة الظہر فإنہ یترکہا ثم یأتی بہا علی أنہا سنة قبل شفعة عنہ محمد وبہ یفتی۔ التنویر مع الدر والرد: ۲/۵۱۲-۵۱۳، کتاب الصلاة، باب ادراک الفریضہ، ط: زکریا دیوبند۔



ویترک سنة الظہر في الحالین ویقضیہا في وقتہ ۔ ملتقی مع المجمع: ۱/۲۱۱، کتاب الصلاة، باب ادراک الفریضہ، ط: زکریا۔



ویترک سنة الظہر في الحالین ای خوف الفوت وعدمہ ویقتدی ثم یقضیہا في وقتہ ۔ الدر الممنتقیٰ مع المجمع: ۱/۲۱۱، کتاب الصلاة، باب ادراک الفریضة ، ط: زکریا دیوبند۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات