عبادات - صلاة (نماز)

India

سوال # 162904

ہمارے یہاں حافظ صاحب نے تراویح کی ۴/ رکعات پڑھادی، دو رکعات پر نہیں بیٹھے بلکہ آخری چوتھی رکعات میں بیٹھے اور سجدہٴ سہو کیا، ایسی حالت میں تراویح کی دو رکعات ہوئی یا چار رکعات ہوئی؟

Published on: Jul 9, 2018

جواب # 162904

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1129-981/D=10/1439



دو رکعت میں بیٹھنا فرض درجہ میں ہے لہٰذا اس کے ترک کرنے کی تلافی سجدہٴ سہو سے نہ ہوسکے گی بلکہ صورت مسئولہ میں دو رکعت فاسد ہوگئی اور صرف اخیر کی دو رکعت نماز صحیح ہوئی۔ لہٰذا دو رکعت کی قضا انفرادی طور پر کرلی جائے اور رمضان کا مہینہ باقی رہ جائے تو قرآن کا جس قدر حصہ دو رکعت فاسد میں پڑھا گیا ہے اسے بھی دہرالیا جائے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات