عبادات - صلاة (نماز)

India

سوال # 147107

میں جب فرض نماز پڑھتا ہوں تو مجھے دنیا کا خیال آتا ہے، دماغ میں دنیا کی باتیں آتی ہیں جب مولانا صاحب کے پیچھے نماز پڑھتا ہوں، مگر جب میں رکوع او رسجدہ میں ہوتا ہوں تو برابر پڑھتا ہوں، مجھ سے کوئی بھی پڑھنے والی چیز چھوٹتی نہیں، التحیات بھی برابر پڑھتا ہوں، کیا مجھے آپ کوئی وظیفہ بتادئیں گے جس سے میرا دھیان نماز پر ہی رہے، اور کیا میری نماز قبول نہیں ہوگی اگر دنیاوی خیال میرے دماغ میں آتے ہیں تو؟

Published on: Jan 9, 2017

جواب # 147107

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 324-272/H=4/1438



خیالات کا آنا برا نہیں ہے، البتہ قصداً دنیاوی باتوں کی طرف دماغ کو لگانا اور خیالات کو لانا برا ہے اور وظیفہ یہ ہے کہ نماز سے پہلے اچھی طرح تیاری کرکے نماز پڑھنے کی جگہ پہنچ جایا کریں وضو اچھا بنانے کی کوشش کریں، نماز کو مکروہات سے بچانے میں سعی کرتے رہیں سنت کے مطابق پوری نماز ادا کیا کریں ، نماز پڑھی جانے والی قراء ت تشہد درود شریف تسبیحات دعاء وغیرہ غلط نہ پڑھا کریں، اگر ان میں کچھ غلطیاں ہوں تو ان کو امام صاحب سے یا کسی سے اصلاح کرالیں۔ ان امور کا خیال رکھتے ہوئے نماز پڑھیں گے تو خواہ خیالات آتے رہیں تب نماز ان شاء اللہ تعالیٰ قبول ہوگی۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات