عبادات - صلاة (نماز)

India

سوال # 11117

وتر( واجب) نماز میں تیسری رکعت میں دعاء قنوت کے لیے ہاتھ اٹھائے بغیر رکوع کے لیے چلا گیا، رکوع میں ہی یاد آیا کہ دعاء قنوت نہیں پڑھی تو کیا رکوع کے بعد کھڑے ہوکر ہاتھ اٹھاکر (تکبیر کہہ کر) دعاء قنوت پڑھ سکتے ہیں؟ اس طرح کیا نماز صحیح ہوگی؟ اگر صحیح نہیں ہوگی،تو پھر اس مسئلہ میں کیا کرنا ہوگا؟

Published on: Feb 22, 2009

جواب # 11117

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 254=254/م


 


دعائے قنوت واجب ہے، اگر سہواً چھوٹ جائے اور اس کی تلافی سجدہ سہو سے ہوسکتی ہے، لہٰذا آپ کو جس وقت یاد آیا کہ دعائے قنوت ہماری رہ گئی ہے تو آپ کو رکوع سے اٹھ کر پہلے دعائے قنوت پڑھنے کی ضرورت نہیں اور نہ رکوع کے بعد ایسا کرنا صحیح ہے، بلکہ اسی حال میں رکوع مکمل کرکے پھر اٹھیں، اور اخیر میں سجدہٴ سہو کرلیں آپ کی نماز درست ہوجائے گی۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات