معاملات - حدود و قصاص

Pakistan

سوال # 22767

میں عرفان عامر لاہور سے یہ بات پوچھنا چاہتا ہوں کہ اگر کوئی شخص بے گناہ قتل کیا جاتاہے تو کیا س کا وقت پورا ہوچکا ہوتاہے یا باقی ہوتاہے؟ اگر پورا ہو چکاہوتاہے تو اس قاتل کو کس بات کا گناہ ہوتاہے اور اگر باقی ہوتاہے تویہ قتل کیسے ہوتاہے؟

Published on: Jul 22, 2010

جواب # 22767

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی(م):930=930-6/1431

صورت مسئولہ میں بے گناہ مقتول شخص کی موت کا وقت پورا ہوچکا ہوتا ہے، کیونکہ ہرشخص کی موت کا حتمی طور پر بغیر کسی تردد کے علم الٰہی میں ایک وقت مقرر ہے جس سے کسی حال میں ایک گھڑی نہ دیر ہوسکتی ہے اور نہ پہل۔ اور قاتل کو اس بات کا گناہ ہوتا ہے کہ اس نے ایک ممنوع فعل کاارتکاب کیا ہے؛ کیونکہ بندہ فعلِ قتل کا خالق نہ سہی مگر کاسب ضرور ہے اور جزا وسزا کا مدار کسب ہی پر ہے:
والمقتول میت بأجلہ أي الوقت المقدّر لہ لا کما یزعم المعتزلة من أن اللہ تعالیٰ قد قطع علیہ الأجل، لنا أن اللہ تعالی قد حکم بآجال العباد علی ما علم من غیر تردد، وبأنہم إذا جاء أجہلم لا یستأخرون ساعة ولا یستقدمون ․․․․ وأن وجود العقاب والضمان علی القاتل تعبديّ لارتکابہ المنہي، وکسبہ الفعل الذي خلق اللہ تعالی عقیبہ الموت بطریق جري العادة فإن القتل فعل القاتل کسبًا وإن لم یکن خلقًا․ (شرح عقائد: ۹۲)


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات