متفرقات - دیگر

India

سوال # 165403

میری بیوی کی ایک عادت جو مجھے سخت نا پسند ہے وہ یہ ہے کہ وہ اکثر بلکہ ہمیشہ ہمارے لڑکے کے سر سے ٹوپی گرا دیتی ہے ، وہ کہتی ہے کہ وہ صرف مذاق میں ایسا کرتی ہے اس کا منشا بے حرمتی کا نہیں ہوتا ہے ،یہ میں بھی جانتا ہوں، لیکن ڈانتا ہوں کہ ایسا نہ کرے لیکن کسی طرح مانتی نہیں بلکہ اگلی مرتبہ مجھے چڑانے وہ پھر سے میرے سامنے لڑکے کی ٹوپی اس کے سر سے زمین پر گرا دیتی ہے ، بتائے اس کا ایسا کرنا کتنا صحیح ہے ؟ کیا ایسا کرنے سے وہ گنہگار ہوگی یا نہیں؟ میں ڈانتا ضرور ہوں سختی نہیں کر پاتا کیونکہ وہ عمل پھر مذاق میں ہی صحیح اور شدت سے کرے گی، اس سلسلے میں جلد رہنمائی فرمائیں کہ میں کیسے اصلاح کروں۔

Published on: Oct 6, 2018

جواب # 165403

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 61-47/H=1/1440



جب کہ آپ (شوہر) کو بیوی کی اس نازیبا حرکت سے تکلیف پہونچتی ہے تو اس حرکت کرنے پر وہ دل دکھانے کے گناہ کی مرتکب ہوتی ہے اس کو چاہئے کہ سچی پکی توبہ کرے اور آپ سے معافی بھی مانگ لے اور آئندہ اس جیسی حرکت سے اپنے آپ کو بچائے رکھے، ورنہ حسن معاشرت سے گذر بسر میں کھنڈت پڑ جانے کاسخت اندیشہ ہے اور پھر بہت سی ناقابل برداشت پریشانیوں کا بھی سامنا کرنا پڑجاتا ہے، آپ اس سلسلہ میں بیوی کے ساتھ سختی کا برتاوٴ نہ کریں بلکہ حکمت و نرمی سے سمجھاتے رہیں اور گھر میں فضائل اعمال ، بہشتی زیور، منتخب احادیث کتابوں کے سننے سنانے اور مطالعہ کا نظام بنالیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات