عبادات - قسم و نذر

india

سوال # 155251

حضرت، میرا نام محمد بلال ہے، میں یہ پوچھنا چاہتا ہوں کہ اگر کوئی کسی کام کی وجہ سے چالیس دن کی جماعت میں جانے کی منت یا نذر مان لے، اور پھر وہ اس منت کو کینسل کردے کہ وہ یہ نہیں کر پائے گا یا نہیں کرے گا کام ہونے سے پہلے، اور کام ہونے سے پہلے اس نے کینسل کر دیا تو کیا ایسا کرنا صحیح ہے؟

Published on: Nov 11, 2017

جواب # 155251

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 66-42/SN=2/1439



نذر صرف ان عبادات کی صحیح اور معتبر ہوتی ہے جو مقصود بالذات ہوں مثلاً نماز روزہ وغیرہ، ”جماعت میں جانا“ عباداتِ مقصودہ میں سے نہیں ہے؛ لہٰذا اس کی نذر کا ایفاء شرعاً لازم نہیں ہے، اگر کوئی شخص اس طرح کی نذر پوری نہ کرے یا کینسل کردے تو شرعاً اس میں کوئی حرج نہیں ہے، جائز ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات