عبادات - قسم و نذر

india

سوال # 155166

کسی نے روزہ رکھنے کی نذر مانی کہ ہر سال دس روزے رکھوں گا اب چند سالوں کے بعد بیمار ہو گیا برابر کے لیے تو اس پر رو زہ واجب ہو گا یا فدیہ؟

Published on: Nov 9, 2017

جواب # 155166

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:20-14/sn=2/1439



جب اس شخص نے ہرسال دس روزے رکھنے کی نذر مانی ہے تو اس پر ہر سال دس روزہ کارکھنا واجب ہے، اگر کسی سال مرض کی وجہ سے رکھنے پر قدرت نہ ہو تو بعد میں قضا کرلے، اگر مرض برابر رہے، بایں طور پر کہ نہ ہرسال روزہ رکھ سکے اور نہ یہ امید ہو کہ آئندہ قضا کرسکے گا تو اس پر واجب ہے کہ ہرسال کے اخیر میں دس روزہ کا فدیہ ادا کرے۔ فتاوی ہندیہ میں ہے: وإذا نذر أن یصوم کل خمیس یأتي علیہ فأفطر خمیسًا واحدًا فعلیہ قضاوٴہ کذا في المحید ولو أخر القضاء حتی صار شیخًا فانیًا أو کان النذر بصیام الأبد فعجز لذلک أو باشتغالہ بالمعیشة لکون صناعتہ شاقة فلہ أن یفطر ویطعم لکل یوم مسکینًا إلخ (۱/۳۰۲، ط: زکریا) نیز دیکھیں: فتاوی دارالعلوم ۱۲ (۷۷، ط: کراچی، سوال: ۲۳، کتاب النذور)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات