معاشرت - نکاح

India

سوال # 161093

کیا فرماتے ہیں اس مسئلہ پر کہ زید نے ایک لڑکی سے نکاح کیا چپکے سے ایک کمرے میں لوگوں سے چھپ کر۔ کمرہ میں صرف چار لوگ تھے: ایک لڑکا ایک لڑکی اور اس لڑکی کے ماں باپ۔ لڑکی کے باپ سے کہا کہ آپ ہمارا نکاح پڑھائیں، انہوں نے ایک پیپر پر لکھے ہوئے لفظوں میں ایجاب و قبول کروا دیا، اور گواہ لڑکی کا باپ اور لڑکی کی ماں بن گئے، اور اس بات کو ۱۰/ سال ہو گئے ہیں ابھی تک نکاح کا اعلان نہیں کیا ہے مگر دونوں ایک ساتھ رہتے ہیں اور میاں بیوی والا رشتہ رکھتے ہیں، تو کیا اس طرح سے نکاح ہو جائے گا؟ اگر نہیں! تو شریعت میں اس کا کیا حکم ہے؟ کیونکہ زید کا کہنا ہے گواہی تو سنت ہے، اور سنت ترک کی جاسکتی ہے۔ نکاح تو صرف لڑکا لڑکی اکیلے بھی کر سکتے ہیں۔
براہ کرم، تفصیل سے جواب عنایت فرمائیں۔ شکریہ

Published on: May 10, 2018

جواب # 161093

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:1065-933/L=8/1439



نکاح کے صحیح ہونے کے لیے مجلسِ عقد میں کم ازکم دومسلمان مردیاایک مرد اور دو عورتوں کا موجودرہنا ضروری ہے ،یہ صرف سنت نہیں ہے ؛اس لیے زید اور اس لڑکی کو چاہیے کہ فوراً دونوں علیحدگی اختیار کرلیں اور شوہر متارکت کے الفاظ مثلاً:میں نے تجھے چھوڑدیا ،تیراراستہ صاف کردیا وغیرہ کے الفاظ کہدے ،اس کے بعد اگر دونوں ساتھ رہنا چاہیں تو دوبارہ باضابطہ دوگواہوں کی موجودگی میں نکاح کرلیں اور سابقہ احوال پر صدق دل سے توبہ واستغفار کریں۔ عن ابن عباس رضي اللّٰہ عنہما أن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال: البغایا اللاتي ینکحن أنفسہن بغیر بینة۔ (سنن الترمذي ۱/۲۱۰رقم: ۱۱۰۹)



عن أبي الزبیر أن عمر رضي اللّٰہ عنہ أتی برجل في نکاح لم یشہد علیہ إلا رجل وامرأة، فقال عمر: ہٰذا نکاح السرّ ولا نجیزہ، ولو کنت تقدمت فیہ لرجمت۔ (رواہ محمد في المؤطا ۱/۲۴۱وہو مرسل صحیح)وذکر البیہقي عن الشافعي أنہ قال: ہو ثابت عن ابن عباس وغیرہ من الصحابة أي قولہ: لا نکاح إلا بشاہدین۔ (الجوہر النقی ۲/۷۹، إعلاء السنن ۱۱/۲۸بیروت)



ولا ینعقد نکاح المسلمین إلا بحضور شاہدین عاقلین بالغین مسلمین الخ، أما اشتراط الشہادة فلقولہ علیہ السلام: لا نکاح إلا بشہود۔ (فتح القدیر / کتاب النکاح ۳/۱۹۹زکریا)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات