معاشرت - نکاح

kolkata

سوال # 157299

ہمارے معاشرت میں یہ چیز رائج ہوا کہ شادی کرنے کے وقت صرف ایک دو ہزار روپے مہر د دیتے ہے ؟کیا ایک دو ہزارمہر دینا جائز ہے ؟اور شریعت مہر دینا کیاہے ؟

Published on: Jan 11, 2018

جواب # 157299

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:343-289/D=4/1439



مہر کی کم سے کم مقدار دس درہم اور موجودہ وزن سے اکتیس گرام ۶۹۶ملی گرام چاندی ہے اس مقدار سے کم مقرر کرنا درست نہیں، لہٰذا ایک دو ہزار روپئے کی مالیت اگر مذکورہ چاندی کی قیمت کے برابر یا اس سے زیادہ ہے تو مہر مقرر کرنا جائز ہوا۔ اگر دونوں فریق (لڑکے والے اور لڑکی والے) راضی ہیں تو کوئی حرج نہیں۔



البتہ مہر چونکہ لڑکی کا حق ہوتا ہے لہٰذا اس کے دادیہالی رشتہ کی لڑکیوں کا جو مہر مقرر کیا جاتا ہے (اگر وہ حد سے بڑھا ہوا نہ ہو) اسی کے مطابق مقرر کرنا چاہیے، یا پھر مہرفاطمی جو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی صاحبزادی کا مقرر فرما یا تھا جس کی مقدار موجودہ وزن ڈیڑھ کلو ۳۱گرام چاندی ہوتی ہے، مقرر کرنا چاہیے، بشرطیکہ یہ دونوں مہر لڑکے کی حیثیت سے بہت زیادہ نہ ہوں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات