عقائد و ایمانیات - اسلامی عقائد

Bangladesh

سوال # 170916

این اللہ تعالی موجود؟ بعض الآیات تدل علی انہ تعالی موجود فی العرش وبعض الآیات تدل علی ان اللہ تعالی موجود فی کل مکان ثم ان عقائد اہل السنة ان اللہ تعالی موجود بلا مکان بلا جہة وآیات القرآن تدل علی المکان لان العرش مکان من الامکنة والقول انہ موجود فی کل مکان تدل علی المکان صراحة کما لا یخفی وما ہو ادلة اہل السنة علی مذہبہم من القرآن والحدیث؟ انا فی ہذا الأمر متردد ارجو منکم ازالة التردد

Published on: Aug 8, 2019

جواب # 170916

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 1133-186T/H=12/1440



اللہ موجود بلا مکان لا شک فیہ کما صرح بہ في ”شرح العقائد“ بلفظہ ”ولا یتمکن في مکان (۷۸، ط: اتحاد) وکونہ موجوداً لا یعنی أنہ جسم مثل أجسامنا؛ لأن فی ہٰذا الصورة یلزم کون اللہ مقیداً بمکان وکونہ مجسماً مع أن اللہ - تعالی- منزہ عنہ ․وفی مثل ہٰذہ المتشابہات فکرتان لأہل السنة والجماعة : (۱) الفکرة الأولیٰ : ذہب جمہور السلف والفقہاء والمحدثین في مثل ہذہ المتشابہات والنصوص إلی التنزیہ مع التفویض أي الصفات التي أُثبتت للہ - تعالی- في النصوص مثلاً اللہ مستوٍ علی العرش ۔ أو ہو معکم أین ماکنتم - فہذہ جمیع الصفات ثابتة للہ کما یلیق بشانہ وصفاتہ لیست بمثل صفات المخلوقین ، ولا نعلم کیفیتہا وحقیقتہا کما ہو منقول في ”تفسیر ابن کثیر“ بہذہ الألفاظ ”وانما یسلک في ہٰذا المقام مذہب السلف ․․․․․من أئمة المسلمین قدیماً وحدیثاً ، وہو إمرارہا کما جاء ت من غیر تکییف ولا تشبیہ ولا تعطیل“ ومسلک التفویض مسلک أکابرنا فی دیوبند أصالةً لما في ”المہنّد علی المفنّد“ و ”إمداد الفتاوی“ ؛ والفکرة الثانیة: ذہب الخلف والمتأخرون في مثل ہذہ النصوص إلی التنزیہ مع التاویل أي یوٴوّلون ہذہ الصفات والنصوص ویحملون علی معنیً یلیق بشانہ - تعالی - مثلاً یقولون: الاستواء علی العرش کنایة عن الاستعلاء والغلبة ، وفي تفسیر ”وہو معکم أین ماکنتم“ منقول أنہ - تعالی- لاینفک علمہ وقدرتہ عنکم بحال کما في ”روح المعاني“ ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات