معاملات - سود و انشورنس

India

سوال # 156949

حضرت، میں ایک مدرسہ کا مہتمم ہوں، لیکن اللہ کے فضل و کرم سے مدرسہ سے کوئی تنخواہ نہیں لیتا ہوں، میرا گھر مدرسہ سے کچھ دور ہے، نوکری کے دن رات گھر سے آنے جانے میں پریشانی ہوتی ہے، اب میں مدرسہ کے کام کی سہولت کے لیے مدرسہ کے پاس ایک زمین خرید کر مکان بنانا چاہتا ہوں، زمین خریدنے کے لیے میرے پاس اتنا پیسہ نہیں ہے، اب کیا اس کے لیے میں بینک سے لون لے سکتا ہوں؟

Published on: Dec 30, 2017

جواب # 156949

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:298-261/D=4/1439



بلا تنخواہ مدرسہ میں کام کرنا بڑے اجر وثواب کا موجب ہوگا ان شاء اللہ۔ اللہ تعالیٰ مکان کے سلسلے کی پریشانی دور فرمائے، بینک سے لون لینے کی صورت میں سود ادا کرنا ہوگا جو کہ ناجائز اور حرام ہے کیونکہ جس طرح سود کا لینا حرام ہے اسی طرح دینا بھی حرام ہے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات