معاملات - وراثت ووصیت

Pakistan

سوال # 172933

ایک شخص کا انتقال ہوگیا، اس کے پسماندگان میں ایک ماں ، ایک بیوی (لاولد ) اور پانچ بھائی ہیں (اس کے انتقال کے بعدایک بھائی کاانتقال ہوگیاہے)، سوال یہ ہے کہ شریعت کے مطابق ہر وارث کوکتنا حصہ ملے گا؟

Published on: Sep 2, 2019

جواب # 172933

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 1395-1037/B=1/1441



شخص مرحوم کا کل ترکہ قرآن و حدیث کے اصول سے 60 سہام میں تقسیم ہوگا۔ جن میں سے مرحوم کی بیوی کو 15 سہام ، ماں کو 10 سہام اور پانچوں بھائیوں کو 7-7 سہام ملیں گے۔ پھر جس بھائی کا انتقال ہو گیا ہے اس کا حصہ اس کے جائز ورثہ میں تقسیم ہو جائے گا۔ آپ نے مرحوم بھائی کے تمام ورثہ کو لکھا ہوتا تو ہم ان سب کا حصہ نکال کر بتادیتے۔ مسئلہ کی شرعی تخریج کا نقشہ حسب ذیل ہے۔



کل حصے   =             60



-------------------------



زوجہ         =             15



ام            =             10



اخ           =             7



اخ           =             7



اخ           =             7



اخ           =             7



اخ           =             7



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات