معاملات - وراثت ووصیت

India

سوال # 155856

حضرت مفتی صاحب! میری نانی کا انتقال ہو چکا ہے، ان کی ۶/ بیٹیاں ہیں اور ۴/ بیٹے ہیں، جس میں ایک بیٹے کا انتقال نانی کی وفات کے بعد ان کا انتقال ہوا،ا ور ۲/ بیٹیاں بھی نانی کے انتقال کے بعد انتقال ہوا۔ تو اب میری نانی کی جائیداد میں ان کی ۶/ بیٹیاں اور ۴/ بیٹوں کا کیا حصہ ہوگا؟ جس بیٹے (نانی کا بیٹا) کا انتقال ہوا اس کی اولاد بھی ہیں اور جو بیٹی (نانی کی بیٹی) کا انتقال ہوا اس کی بھی اولاد ہیں، تو اب شریعت میں ۶/ بیٹیاں اور ۴/ بیٹوں کا کیا حصہ ہوگا؟ کن کا کتنا حصہ شیئر ہوگا؟
براہ کرم جواب عنایت فرمائیں۔

Published on: Nov 2, 2017

جواب # 155856

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 175-145/M=2/1439



صورت مسئولہ میں اگر آپ کی نانی کے انتقال کے وقت آپ کے نانا بھی مرحوم ہو چکے تھے اور نانی کے والدین بھی انتقال کرچکے تھے صرف ۶/ بیٹیاں اور ۴/ بیٹے موجود تھے تو نانی مرحومہ کا پورا ترکہ شرعاً ۱۴/ حصوں میں تقسیم ہوگا جن میں سے ہر بیٹے کو ۲-۲/ حصے اور ہر بیٹی کو ۱-۱/ حصہ ملے گا پھر نانی کے انتقال کے بعد جن بیٹے، بیٹیوں کا انتقال ہوگیا ان کا ترکہ ان کے شرعی ورثہ میں حسب حصص شرعیہ تقسیم ہو جائے گا۔



کل حصے   =       ۱۴



-------------------------



ابن       =       ۲



ابن       =       ۲



ابن       =       ۲



ابن       =       ۲



بنت       =       ۱



بنت       =       ۱



بنت       =       ۱



بنت       =       ۱



بنت       =       ۱



بنت       =       ۱



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات