معاملات - وراثت ووصیت

india

سوال # 154445

کیا فرماتے ہیں علمائے دین، زید کا انتقال ہوچکا ہے، اس کی اولادوں میں ۴/ لڑکیاں اور ایک لڑکا اور ایک بیوی ہے۔ لڑکیاں سب شادی شدہ اور صاحب اولاد ہیں۔ ترکہ میں چھوڑی ہوئی چیزیں مندرجہ ذیل ہیں:۔
(۱) مکان جس میں بیوی، لڑکا، بہو اور بچے رہتے ہیں۔
(۲) کھیتی ہے۔
(۳) کھیتی جو دوسروں کی شراکت کے ساتھ ہے۔
(۴) کچھ نقد روپئے۔
براہ کرم، کتاب و سنت کی روشنی میں بتائیں کہ کس کو کتنا حصہ ملے گا اور کیسے؟ اور اگر کوئی اپنا حصہ نہ لینا چاہے تو پھر کیسے تقسیم ہوگا؟

Published on: Sep 27, 2017

جواب # 154445

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 1327-1090/D=1/1439



زید کے انتقال کے بعد اس کے ترکہ میں سے اولاً تجہیز و تکفین کے اخراجات پورے کئے جائیں پھر اگر اس پر قرض ہو تو اس کی ادائیگی کی جائے اور اگر انہوں نے کوئی جائز وصیت کی ہو تو ۳/۱ (ایک تہائی) میں سے اس کی تنفیذ کی جائے گی پھر جو کچھ کھیت، مکان، نقد، اثاث البیت وغیرہ ان کی ملکیت میں بچے سب کے اڑتالیس (۴۸) حصے کئے جائیں گے جن میں سے ۶/ حصے بیوی کے، ۱۴/ حصے لڑکے کو ، سات سات حصے ہر لڑکی کو ملیں گے۔



کل حصے                          =                                                                                       ۴۸



-------------------------



بیوی                               =                                                                                       ۶



بیٹا                                  =                                                                                       ۱۴



بیٹی                                 =                                                                                       ۷



بیٹی                                 =                                                                                       ۷



بیٹی                                 =                                                                                       ۷



بیٹی                                 =                                                                                       ۷



 



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات