معاملات - وراثت ووصیت

India

سوال # 154303

میر ے تین لڑکے ہیں، میں نے بڑے لڑکے کی شادی کرادی اور 8 مہینہ کے بعد لڑکے کا ا نتقال ہوگیا،ہے ، بہو عدت میں ہے ، ابھی 40 دن گذرے ہیں، لڑکی کا باپ اپنے یہاں لے جا نا چاہتا ہے اور کہتا ہے کہ لڑکی کا حصہ دو، لڑکے کا باپ ابھی زندہ ہے ، دو لڑکے اور ہیں ، ابھی اور مرحوم کے نام سے کوئی وراثت نہیں ہے ، براہ کرم، تفصیل بتائیں۔

Published on: Sep 25, 2017

جواب # 154303

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 1273-213/D=1/1439



عدت کے دوران دوسری جگہ لے جانا جائز نہیں ہے، بہو کو عدت آپ کے گھر میں ہی پوری کرنی چاہیے، اگر اس کا مہر ادا نہ ہوا ہو تو لڑکے کی املاک میں سے اس کی ادائیگی کردی جائے۔ اگر لڑکے کی املاک نہ ہوں تو آپ پر ادائیگی واجب نہیں، البتہ آپ کی حیثیت ہو اور مہر ادا کردیں تو بہتر ہے۔ نیز جہیز زیور وغیرہ جو کچھ بہو کی ملکیت میں تھا اسے وہ لے جاسکتی ہے۔



اسی طرح مرحوم لڑکے نے جو کچھ سونا چاندی زمین نقد اثاث البیت اپنی ملکیت میں چھوڑا ہو وہ اس کا ترکہ بن گیا اس میں سے 1/4 (چوتھائی) اس کی بیوی پانے کی مستحق ہے، واضح رہے کہ جو چیزیں مرحوم لڑکے کی ملکیت میں ہوں گی انھیں میں اس کی بیوی وارث ہوگی۔



آپ یعنی مرحوم لڑکے کے باپ کی جو املاک ہیں ان میں بہو (مرحوم بیٹے کی بیو) کا کوئی حصہ نہیں ہے، بہو کے باپ کومطالبہ کرنے کا بھی حق نہیں، یہ سب آپ کی ملکیت ہیں آپ مالک ومختار ہیں آپ کی زندگی میں نہ کسی لڑکے کا حق اس سے متعلق ہے نہ لڑکا کا، بہو کی عدت پوری ہونے کے بعد کسی دوسری جگہ اس کا نکاح کردیا جائے تاکہ چین وعافیت سے وہ زندگی گذارے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات