معاملات - وراثت ووصیت

Pakistan

سوال # 149558

براہ کرم ، ایک بیوہ اور چار بیٹیوں کے درمیان وراثت کا طریقہ بیان فرما دیجئے ۔

Published on: Mar 15, 2017

جواب # 149558

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:  564-508/N=6/1438



 



اگر کسی مرحوم نے اپنے وارثین میں صرف ایک بیوی اور چار بیٹیاں چھوڑیں، ان کے علاوہ کوئی عصبہ یا غیر عصبہ وارث نہیں چھوڑا، جیسے: بیٹا،ماں، باپ، دادا، دادی، نانا، نانی ، بھائی ، بھتیجا، چچا اور چچا زاد بھائی وغیرہ تو مرحوم کا ترکہ بعد ادائے حقوق متقدمہ علی الارث ۳۲/ حصوں میں تقسیم ہوگا، جن میں سے بیوہ کو ۴/ حصے اور چار بیٹیوں میں سے ہر بیٹی کو (بہ طور فرض اور رد) ۷، ۷/ حصے ملیں گے۔ تخریج مسئلہ حسب ذیل ہے:



زوجة        =             ۴



بنت         =             ۷



بنت         =             ۷



بنت         =             ۷



بنت         =             ۷



-------------------------------------



کل حصے                    ۳۲



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات