متفرقات - حلال و حرام

India

سوال # 160691

کیافرماتے ہیں مفتیان کرام مسئلہ ذیل کے بارے میں ؟ میں ڈیجیٹل کرنسی بٹ کوئن کی ایک قسم میں انویسمنٹ کرتاتھا اور اس کے متعلق ہمارے علاقہ کے ایک عالم نے مجھے بتایا تھا کہ یہ جائز ہے اس لئے میں نے شروع کیا تھا لیکن جب بعد میں اس کا ممنوع ہونا معلوم ہوا تو میں نے اس میں کام کرنا چھوڑ دیا۔
اب مسئلہ یہ ہے کہ کمپنی کا ایک اصول یہ تھا کہ اگر کوئی ممبر کمپنی سے مختلف لوگوں کو منسلک کراکے کمپنی کی متعینہ مقدار تک پہونچ جائے تو کمپنی اسے تین آدمیوں کے عمرہ کا ٹکٹ دے گی۔ اب مجھے اس کمپنی کی طرف سے تین افراد کے عمرہ کا ٹکٹ آفر ہواہے تو کیاکسی صورت میں اس کمپنی کی جانب سے دیے گئے ٹکٹ سے عمرہ کرنا جائز ہے ؟ اگر جائزنہیں تو اس ٹکٹ کاکیاجائے ؟ کیا اس ٹکٹ سے کسی غریب کو بلا نیت ثواب عمرہ کروا سکتے ہیں یا اسی طرح اسے ضائع کر دیا جائے ؟
مفصل جواب ارسال فرما کر شکریہ کا موقع عنایت فرمائیں۔

Published on: Apr 22, 2018

جواب # 160691

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:981-860/L=8/1439



عمرہ ایک عبادت ہے اس کی ادائیگی پاکیزہ مال سے کرنی چاہیے؛ اس لیے آپ کمپنی سے ٹکٹ نہ لیں اور اگر لے لی ہو تو اس کو واپس کردیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات