متفرقات - حلال و حرام

India

سوال # 158395

جمعہ کی اذان ہونے پر کیا کاروبار بند کرنا ضروری ہے؟ ہم دو بھائی ہیں، اذان ہونے پر ایک بھائی نماز کو جاتا ہے، پھر اس کے آنے کے بعد میں دوسری مسجد میں نماز کو جاتا ہوں۔

Published on: Jan 31, 2018

جواب # 158395

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:471-384/sd=5/1439



جس شخص کا جس مسجد میں نماز جمعہ پڑھنے کا ارادہ ہو، اس پر اسی مسجد کی پہلی اذان ہوجانے کے بعد بیع وشراء وغیرہ کرنا ممنوع ہوگا،لہذا صورت مسئولہ میں اگر ایک دوکان پر آپ دو بھائی بیٹھتے ہیں اور دونوں الگ الگ مسجد میں جمعہ کی نماز اداء کرتے ہیں، توآپ دونوں میں سے جس کا جس مسجد میں نماز پڑھنے کا ارادہ ہو، اس کی پہلی اذان ہونے کے بعدوہ بیع و شرا بند کردے اور دوکان سے اٹھ کر نماز کی تیاری شروع کردے ، پھر نماز سے فارغ ہو کر دوکان پر بیٹھ جائے اور دوسرا بھائی اپنی مسجد کی اذان کے وقت نماز کی تیاری شروع کردے ، شرعا ایسا کرنا جائز ہے ،اس دوران دوکان بند کرنا ضروری نہیں ہے ۔ یستفاد: وفی التاتارخانیة : إنما یجیب أذان مسجدہ، وسأل الدین عمن سمعہ فی آن من جہات ماذا یجب علیہ ؟ قال : إحابة مسجدہ بالفعل قال الشامی : قولہ انما یجب أذان مسجدہ أی بالقدم۔ (الدر المختار مع رد المحتار ، قبیل باب شروط الصلاة، احسن الفتاویٰ ۴/۱۱۹) 



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات