متفرقات - حلال و حرام

INDIA

سوال # 157664

میں نے ایک کمپنی کے ساتھ ایک کاروبار شروع کر دیا، اس کمپنی سے پیسہ کمانے کی عمل ذیل میں دی گئی ہے ، میں نے (اے ) مصنوعات کو ایک کمپنی سے خریدا، کمپنی نے مجھے اپنے سامان فروخت کرنے کی اجازت دی، اس کے بدلے میں وہ پیسہ ادا کروں گا، اگر میں مصنوعات کو دو افراد (بی، سی) کو فروخت کرتا ہوں تو میں پیسہ کماؤں گا اور اس وقت کمپنی ان دونوں لوگوں کو بھی اسی اختیار (اپنی چیزوں کو بیچنے کے لئے ) فراہم کرے گا، تاہم یہ اختیار ہر چیز کو حاصل کرنے کے لئے جاری رکھیں گے جو چیزوں کو خریدنے کے لئے جاری رکھیں گے ، اب اگر میں ایک مصنوعات بیچتا ہوں، تو میں ان کمیشن (بی، سی) کے ساتھ ہوں جس میں مجھ میں ملوث ہے ۔ اگر بی اور سی کسی بھی چیز کو فروخت کرتے ہیں تو میں ان کے ساتھ بھی پیسہ کماتا ہوں اور یہ عمل سی، ڈی، ای، ایف .......... وغیرہ تک جاری رہتا ہے ۔ یہاں ہمارے تمام سطحوں کے لئے ایک ہی کمیشن ہے ۔
براہ کرم مجھے بتاؤ کہ اس کاروبار سے کمائی پیسہ حرام یا حلال ہے ؟

Published on: Jan 22, 2018

جواب # 157664

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:451-367/sn=4/1439



مذکور فی السوال کمپنی کا جو طریقہٴ کار آپ نے تحریر کیا ہے اس سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ کمپنی ”ملٹی لیول مارکیٹنگ“ کے اصول پر بزنس کرتی ہے اور ملٹی لیول مارکیٹنگ کے اصول جہالت، غرر، دھوکہ، مختلف معاملوں کو ایک ساتھ گڈمڈ کردینا، غیر متعلق چیزوں کو کاروبار کے لیے شرط قرار دینا جیسی شرعی قباحتوں پر مبنی ہوتے ہیں؛ اس لیے آپ اس کمپنی میں جڑکر کام نہ کریں، کوئی دوسرا بے غبار ذریعہٴ آمدنی تلاش کریں۔ (تفصیل کے لیے دیکھیں: نیٹ ورک مارکیٹنگ، ط: اسلامک فقہ اکیڈمی، انڈیا)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات