متفرقات - حلال و حرام

India

سوال # 151999

میرا سوال یہ ہے کہ میرے گھر میں بالکل صحیح اور بلا چوری کی بجلی استعمال ہوتی ہے جبکہ میرے آس پاس کے تمام گھروں میں آدھی بجلی چوری سے جلائی جاتی ہے ، نتیجے میں میرے گھر ہزاروں کا اور دوسروں کے گھر چند سو کا بل آتا ہے اور کچھ لوگ لائٹ مین کو رشوت دیکر اپنا بل کم بنوا لیتے ہیں ۔اب ہمارے والد کا کہنا ہے کہ سرکار خود ہی چور ہے رعایا کا پیسہ نیتا کھا رہے ہیں، ہر طرف سے رعایا کو لوٹا جا رہا ہے اور ہم ایمانداری کی بجلی جلاکر خود ہی کنگال ہو رہے ہیں ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ اگر ہر گھر میں ایمانداری کی بجلی جلے تو نہ ہی بجلی مہنگی ہو اور نہ ہی اتنا بل آئے مگر سرکار ڈھیل دئے ہوئے ہے ۔ 80 فیصد گھروں میں ایمانداری کی بجلی نہیں جل رہی تو ایمانداروں کو بھگتنا پڑتا ہے ۔ اب وہ اس بات پہ مصر ہیں کہ ہمارے یہاں بھی ان وجوہات کی بنا پر بل کم کرنے کے لئے یا تو آدھی بجلی چوری کی جلائی جائے یا لائٹ مین کو رشوت دیکر بل کم کرایا جائے ہم اتنا بل نہیں دے سکتے ۔ برائے کرم یہ بتائیں کہ ان حالات میں اس طرح بجلی استعمال کرنا جائز ہے یا نہیں؟

Published on: Jun 19, 2017

جواب # 151999

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa: 1011-966/N=9/1438



بجلی، محکمہ بجلی کے آفیسران کی ملک نہیں ہوتی ہے؛ بلکہ حکومت کی ہوتی ہے اور حکومت ملک کے عوام کی نمائندہ ہوتی ہے؛ اس لیے سوال میں ذکر کردہ حالات میں بھی بجلی کی چوری جائز نہ ہوگی اور بجلی کی چوری کے لیے لائن مین کو رشوت دینا ڈبل گناہ ہے؛ ایک تو چوری کا گناہ اور دوسرے: رشوت دینے کا گناہ۔ اور جو لوگ رشوت دے کر یا ایسے ہی چوری کی بجلی استعمال کررہے ہیں، وہ اپنے عمل کے خود ذمہ دار ہیں؛ لہٰذا آپ اپنے والد صاحب کو بجلی کی چوری سے منع کریں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات