عبادات - حج وعمرہ

Pakistan

سوال # 145961

اس مرتبہ حج پہ سعودی حکومت نے رمی کے لیے مکاتب کے اوقات مقرر کر دیئے تھے ،دوسرے روز کی رمی کے اوقات ایک مکتب کیلئے صبح دس بجے تھا، حجاج کرام نے وقت مقرر پہ رمی کر لی اس پی ایک مفتی صاحب نے حجاج کو بتایا کہ احناف کے مطابق دوسرے اور تیسرے روز رمی زوال ک بعد کرنی چا ہئے اس لئے آپ لوگ دم ادا کریں۔ محترم اس معاملہ میں حجاج کرام کو کیا کرنا چا ہئے ، جب کہ ایسے معاملات میں حجاج کرام سعودی حکومت کے تابع ہوتے ہیں۔

Published on: Nov 17, 2016

جواب # 145961

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 112-066/B=2/1438



احناف کے یہاں دوسرے اور تیسرے روز کی رمی زوال کے بعد واجب ہوتی ہے اگر کسی نے زوال سے پہلے کرلی تو اس پر دم واجب ہوگا، رمی کرنے والے کو اتنی معلومات تو رکھنی چاہئے محض معلم کے ملازمین کے کہنے میں نہ آنا چاہئے۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات