عبادات - حج وعمرہ

India

سوال # 145525

بہت سارے لوگ کہتے ہیں کہ عمرہ کرنے کے بعد حج فرض ہوجاتا ہے اگر نہیں کریں گے تو کیا گنہگار میں شامل ہو جائیں گے؟

Published on: Nov 12, 2016

جواب # 145525

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 051-052/D=2/1438



 



سال کے کسی بھی وقت میں عمرہ کرنے سے حج فرض ہو جائے ایسا نہیں ہے بلکہ حج اس عمرہ کرنے والے پر فرض ہوتا ہے۔ (۱) جس نے اپنا حج فرض ادا نہ کیا ہو اور (۲) وہ عمرہ اشہر حج میں کررہا ہو اور (۳) عمرہ کرنے کے بعد حج کی تاریخ تک مکہ میں رکنے کے اخراجات اس کے پاس ہوں نیز (۴) قانونی طور پر مکہ میں رکنے میں رکاوٹ نہ ہو لہٰذا اگر کوئی شخص اشہرِ حج ہی میں عمرہ کررہا ہو مگر بقرعید تک رکنے کا اس کے پاس خرچ نہ ہو یا حکومت کی طرف سے ویزہ نہیں ہے تو اس پر حج فرض نہ ہوگا۔ عن ابن عمر قال جاء رجل إلی النبي صلی اللہ علیہ وسلم فقال: یا رسول اللہ ما یوجب الحجَّ؟ قال: الزاد والراحلة، ترمذی: ا/۱۶۸، باب في إیجاب الحج بالزاد الخ۔ الحج واجب علی الأحرار البالغین العقلاء الأصحاء إذا قدروا علی الزاد والراحلة فاضلا عن المسکن وما لابد منہ وعن نفقہ عیالہ إلی حین عودہ۔ ہدایة: ۱/ ۲۳۱- ۲۳۲، ط: اشرفي دیوبند۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات