عقائد و ایمانیات - حدیث و سنت

Bangladesh

سوال # 161139

حضور صلّ اللہ علیہ وسلم پر جادو کا جو واقعہ ہے ، کیا یہ صحیح ہے ؟ مفتی ظر ولی خان صاحب نے فرمایا کے یہ واقعہ ضعیف ہے ۔ اور اس کو نبی کی شان کے خلاف بتایا ہے ۔ نبی پر جادو کس طرح ہو سکتا ہے ؟ جبکہ ان کا ایمان بہت مضبوط ہے ؟ رہنماء فرمائیں۔ جزاک اللہ

Published on: May 16, 2018

جواب # 161139

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:874-758/D=8/1439



سحر ایسے اثر کو کہتے ہیں جس کا سبب ظاہر نہ ہو خواہ معنوی کوئی سبب ہو جیسے خاص خاص کلمات کا اثر یا غیر محسوس چیزوں کا ہو جیسے جنات وشیاطین وغیرہ کا اثر۔ پس ان چیزوں کے اثر سے حضراتِ انبیائے کرام بھی متأثر ہوسکتے ہیں جیسے ظاہر اسباب کا اثر ان پر ظاہر ہوتا۔ اس میں ایمان کے قوی یا ضعیف ہونے کو دخل نہیں؛ بلکہ اسباب کی تاثیر کا دخل ہے۔



اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر سحر کے اثر کا ہونا احادیث صحیحہ سے ثابت ہے، بخاری شریف ۲/۸۵۸، حدیث ۵۷۶۶میں روایت موجود ہے ۔



آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم پر لبید یہودی اور اس کی بیوی نے جادو کردیا تھا اس کے بعد آپ کو ایسا لگنے لگا تھا کہ آپ کسی کام کو کرچکے ہیں جب کہ آپ نے وہ کام نہیں کیا ہوتا تھا، یہاں تک کہ ایک روز آپ نے حق تعالیٰ سے دعا کی اس پر سورة الناس اور سورة الفلق نازل ہوئیں جن میں ایک کی پانچ آیتیں اور ایک کی چھ آیتیں مجموعہ گیارہ آیتیں ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو وحی سے سحر کا موقعہ بھی معلوم کرادیا گیا تھا، چنانچہ وہاں سے مختلف چیزیں نکلیں جن میں سحر کیا گیا تھا اور اس میں ایک تانت کا ٹکڑا بھی نکلا جن میں گیارہ گرہیں لگی ہوئی تھیں حضرت جبرئیل علیہ السلام سورتیں پڑھنے لگے ایک ایک آیت پر ایک ایک گرہ کھلنے لگی چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم مکمل طور پر شفایاب ہوگئے ۔ مزید تفصیل کے لیے روح المعانی درمنثور اور شروحات حدیث میں موجود ہیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات