India

سوال # 175072

ہم اپنی ہندوستانی بیکریوں سے جو روٹیاں حاصل کرتے ہیں وہ حلال / حرام ہیں؟ جب میں خالص تلاشی کے عمل سے گزر رہا تھا تو مجھے نیچے کی چیز کا پتہ چل گیا ، یہ خمیر کے خلیوں میں اضافہ ہوتا ہے ، گلوٹین پروٹین کے ٹکڑے نیٹ ورک تشکیل دیتے ہیں اور کاربوہائیڈریٹ (نشاستے ، شکر) کے ٹوٹنے سے شراب اور کاربن ڈائی آکسائیڈ بنتے ہیں۔ جو آٹے میں قدرتی طور پر پائے جاتے ہیں۔ خمیر چینیوں کو اسی طرح استعمال کرتا ہے جس طرح ہم کرتے ہیں ، یعنی یہ چینی کو کاربن ڈائی آکسائیڈ اور پانی میں توڑ دیتا ہے۔ خمیر اور آٹے میں موجود انزائم بھی اس رد عمل کو تیز کرنے میں معاون ہیں۔ جب کافی مقدار میں آکسیجن موجود ہو تو مندرجہ ذیل ردعمل ہوتا ہے: جو توانائی جاری کی جاتی ہے وہ خمیر استعمال کرتے ہیں جس کی نشوونما اور سرگرمی ہوتی ہے۔ ایک روٹی کے آٹے میں جہاں آکسیجن کی فراہمی محدود ہے ، خمیر صرف شوگر کو جزوی طور پر خراب کرسکتا ہے۔ اس عمل میں الکحل اور کاربن ڈائی آکسائیڈ تیار ہوتے ہیں جسے الکحل ابال کے نام سے جانا جاتا ہے۔ ان رد عمل میں پیدا ہونے والا کاربن ڈائی آکسائیڈ آٹا اٹھنے (خمیر ہونے یا ثابت کرنے) کا سبب بنتا ہے ، اور جو شراب تیار ہوتی ہے وہ زیادہ تر بیکنگ کے عمل کے دوران آٹے سے بخارات بن جاتی ہے۔ ابال کے دوران ہر خمیر کا خلیہ ایک ایسا مرکز بناتا ہے جس کے ارد گرد کاربن ڈائی آکسائیڈ کے بلبلے بنتے ہیں۔ ہزاروں چھوٹے بلبلوں ، ہر ایک آٹے کے ٹکڑے کے اندر گلوٹین فارم خلیوں کی ایک پتلی فلم سے گھرا ہوا ہے۔

Published on: Dec 12, 2019

جواب # 175072

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 447-312/B=04/1441



سوال میں جو تحقیق آپ نے تحریر فرمائی ہے ، یہ آپ کی ذاتی تحقیق ہے؟ یا آپ نے کسی لیبارٹری میں خمیر کی جانچ کی ہے؟ عام تجربہ کار ماہر ڈاکٹر لوگ کیا کہتے ہیں؟ شریعت اسلام میں کسی چیز کے حرام ہونے کا مدار یہ ہے کہ اس میں ناپاک یا حرام جز کو شامل کیا گیا ہو جس کو لیبارٹری میں دو مسلمان دیندار دیانتدار ڈاکٹروں نے ریسرچ کرکے دیکھا ہو۔ اور پورے یقین کے ساتھ شہادت دی ہو کہ اس میں فلاں فلاں چیز حرام اور ناپاک ملی ہوئی ہے۔ پہلے یہ تحقیق سامنے آئے تو اس کے بعد کوئی جواب لکھا جا سکتا ہے۔ محض آپ کی فلسفیانہ جوڑ توڑ کی باتیں شریعت میں مدار نہیں بنائی جا سکتی ہیں۔



--------------------------------



سوال کی تفصیلات بھی پوری طرح واضح نہیں ہیں۔ (ص)



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات