India

سوال # 169864

جس ماکول اللحم جانور کو اس کا مالک آزاد چھوڑدے اور اس سے اپنا حق ملکیت منقطع کرلے اور وہ جانور جنگلوں اور کھیتوں میں آوارہ پھرنے لگے تو کیا اس جانور کو ذبح کرکے اس کے گوشت کی خیدوفروخت اور. کھانا جائز ہے ؟

Published on: Apr 30, 2019

جواب # 169864

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 794-737/M=08/1440



جو جانور غیر اللہ کے نام پر چھوڑ دیا جائے اور مقصود اس سے تقرب بغیر اللہ ہو وہ ما اہل بہ لغیر اللہ میں داخل ہونے کی وجہ سے اس کا کھانا حرام ہے لیکن وہ جانور چھوڑنے کے بعد بھی چونکہ ان ہی چھوڑنے والوں کی ملک رہتے ہیں اس لئے اگر وہ جانور ماکول اللحم ہے اور مسلمان اُن کے مالکان سے خرید لیں تو پھر ان کو ذبح کرکے کھانا اور ان کے گوشت کو بیچنا جائز ہو جائے گا کیونکہ جب ان جانوروں کو مالکوں نے فروخت کیا تو غیر اللہ کا نام ہی اٹھ گیا اس لئے اب ان کی خرید و فروخت میں مضایقہ نہیں۔ (مستفاد فتاوی دارالعلوم دیوبند: ۱۵/۴۳۵) ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات