India.

سوال # 169552

اولاد نہ ہونے کی صورت میں اپنی حقیقی بہن کے بیٹے کو اپنا بیٹا بنانا
کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام مسئلہ ذیل کے بارے میں کہ؛
(1) زید کی کوئی اولاد نہیں ہے تو زید کی حقیقی بہن نے بخوشی سرکاری کاغذات کے حساب سے اپنا ایک چھوٹا لڑکا زید کو دے دیا تو کیا اب زید کے لیے اس بچے کو اپنانا شرعا جائز ہے؟
(2) اس بچے کا عقیقہ کس پر لازم ہے آیا زید پر یا اس کی بہن کے شوہر پریا دونوں پر؟
(3) قیامت کے دن وہ بچہ کس کا شمار ہوگا؟ زید کا یا اس کی بہن کے شہوہر کا؟ مثلا اگر وہ بچہ حافظ ?قرآن ہو تو تاج کس کے سر پر ہوگا؟
(4) زید کی بیوی سے حرمت مثلا مؤبدہ ثابت ہوگی؟

Published on: Apr 2, 2019

جواب # 169552

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa:691-581/sn=7/1440



(۱) زید کے لیے اس بچے کی پرورش کرنا اس کو پالنا پوسنا تو شرعاً جائز ہے؛ لیکن گود لینے کی وجہ سے یہ بچہ زید کے حقیقی بیٹے کے درجے میں نہ ہوگا اگرچہ زید کی بہن نے باقاعدہ تحریری طور پر زید کو بچہ دیدیا ہو؛ لہٰذا اس بچے کی ولدیت میں زید کے لیے اپنا نام لکھنا شرعاً جائز نہ ہوگا، نیز بچہ کے مراہق یا بالغ ہونے پر زید کی بیوی کا اس بچے سے پردہ کرنا ضروری ہوگا، زید کے انتقال پر یہ بچہ شرعاً اس کا وارث نہ ہوگا۔



قال اللّٰہ تعالیٰ: ادْعُوہُمْ لِآبَائِہِمْ ہُوَ أَقْسَطُ عِنْدَ اللَّہِ الآیة․ (سورہٴ احزاب) وقال النبي صلی اللہ علیہ وسلم: من ادعی إلی غیر أبیہ فعلیہ لعنة اللہ والملائکة والناس أجمعین․ لا یقبل منہ صرف ولا عدل (بخاری وصحیح مسلم) وفي روح المعاني: ویعلم من الآیة أنہ لا یجوز انتساب شخص إلی غیر أبیہ وعد ذلک بعضہم من الکبائر․ اھ (۱۱/۱۴۷، بیروت)



(۲) عقیقہ میں اصل یہ ہے کہ باپ کرے؛ لہٰذا صورت مسئولہ میں اس بچے کا عقیقہ کرنا زید کے ذمے نہیں ہے۔



(۳) یہ بچہ اس کا شما رہوگا جس کے صلب سے یہ پیدا ہوا یعنی اس کا حقیقی باپ (زید کا بہنوئی)؛ باقی اگر زید اس کی اچھی طرح تعلیم وتربیت کرے گا تو اسے اس کا اجر ملے گا۔



(۴) نہیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات