India

سوال # 146510

کیا فرماتے ہیں علمائے دین ایسے شخص کے متعلق کہ زید جو کہ عالم دین ہے اور مسجد میں امام بھی ہے اور دینی مدرسہ میں خدمت بھی انجام دیتے ہیں اور وہ نمازِ عشاء کے بعد کسرتِ بدن کے لیے جم جاتے ہیں لیکن اس میں دوچار لڑکیاں بھی کبھی ہوتی ہیں وہ بھی کسرت کرتی ہیں لیکن حتی المقدور بدنگاہی سے بچنے کی کوشش بھی ہوتی ہے اور پھر اس جم میں گانے بھی لگائے جاتے ہیں حالانکہ زید کا دہان اس جانب بالکل نہیں ہوتا نہ ہی ان کے الفاظ کی جانب بلکہ اکثر تو ان گانوں کی زبان بھی نہیں آتی اور زید کو ان کے جسمانی لحاظ سے کسرت کی سخت ضرورت ہے ، وہ کافی سست رہتے ہیں اور بہت موٹے بھی ہیں۔
برائے کرم صحیح بات کی جانب رہنمائی فرمائیں تو کرم ہوگا۔ خیر فی الدارین۔

Published on: Dec 1, 2016

جواب # 146510

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa ID: 220-166/H=2/1438



 



امام یا عالِم اور مقتدائے قوم کے لیے بالخصوص ایسے جِم میں جاکر کسرت کرنا کہ جس میں لڑکیاں اور گانے بجانے سے سابقہ پڑتا ہو اور اِن گناہوں سے کلی طور پر تحفظ کی کوئی صورت نہ ہو جائز نہیں عام مسلمان اور خاص طور پر مقتدی حضرات کو بدگمانیاں بھی ہوں گی حدیث شریف میں مواقع تہمت سے بچنے کا حکم وارد ہوا ہے ان وجوہ سے بھی جِم میں جانے کی اجازت نہیں رہا موٹاپے یا کسی اور ضرورت سے کسرت کرنے کی حاجت اگر درپیش ہوتو اس کے لیے بجائے جِم میں جانے کے گھر میں بھی بہت سی صورتیں اختیار کی جاسکتی ہیں اس کے ماہرین سے تحقیق کرکے جو صورت مناسب ہو گھر میں اختیار کرلیں۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات