عقائد و ایمانیات - دعوت و تبلیغ

India

سوال # 2200

کیا چالیس دن یا چار مہینے تبلیغی جماعت میں جانا فرض عین ہے یا کفایہ؟ جو چالیس دن یا چار مہینے نہ جائے تو کیا وہ دائر اسلام سے خارج ہو جائے گا ؟یا نہیں؟ قرآن و حدث کی روشنی میں جواب دیں۔

Published on: Nov 25, 2007

جواب # 2200

بسم الله الرحمن الرحيم

فتوی: 1942/ ھ= 1484/ ھ


 


جماعت تبلیغ میں مدتہائے مذکورہ کے لیے نہ جانا خروج عن الاسلام کا موجب تو ہرگز نہیں البتہ بقدر ضرورت دین سیکھنا ہرشخص پر واجب ہے اگر کسی شخص کو دین سیکھنے کا دوسرا کوئی موقعہ میسر نہ ہو بجز جماعت تبلیغ میں نکل کر سیکھنے کے اس کے حق میں فرض عین ہونا ظاہر ہے جیسا کہ اس وقت امت کے بہت بڑے طبقہ کا ایسا ہی حال ہے، رہا چالیس دن چار ماہ یا کم و بیش تو یہ ایسا ہی ہے جیسا کہ مدارس میں اوقات تعلیم و تعطیل مقرر کرلیے جاتے ہیں اور ان ہی اوقات میں تعلیم وتعلم کو انجام دیا جاتا ہے اسی طرح بعض جگہ فرض کفایہ وغیرہ بھی ہوسکتا ہے۔


واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات