عقائد و ایمانیات - دعوت و تبلیغ

India

سوال # 166254

ہمارے گاؤں میں ایک صاحب یہ کہتے ہیں کہ تبلیغی جماعت بدعت ہے ، کیا یہ بات صحیح ہے ؟ جواب ضرور دیں۔

Published on: Nov 27, 2018

جواب # 166254

بسم الله الرحمن الرحيم


Fatwa : 177-294/M=3/1440



اُن صاحب کا قول صحیح نہیں ہے اصل بات یہ ہے کہ دین کی دعوت و تبلیغ اعلی درجے کی عبادت ہے، اور قرآن کریم اور حدیث نبوی میں جابجا اس کی تاکید موجود ہے، دین سیکھنے اور سکھانے کے لئے جماعت تبلیغ وقت فارغ کرنے کا جو مطالبہ کرتی ہے وہ بھی کوئی نئی ایجاد نہیں بلکہ ہمیشہ سے مسلمان اس کے لئے وقت فارغ کرتے رہے ہیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے تبلیغی وفود بھیجنا ثابت ہے، رہی سہ روزہ ، ایک چلہ، تین چلہ اور سات چلہ تخصیص تو یہ خود مقصود نہیں بلکہ مقصود یہ ہے کہ مسلمان دین کے لئے وقت فارغ کرنے کے تدریجاً عادی ہو جائیں اور ان کو رفتہ رفتہ دین سے تعلق اور لگاوٴ پیدا ہو جائے، پس جس طرح دینی مدارس میں ۹/سالہ، سات سالہ (کورس) نصاب تجویز کیا جاتا ہے اور آج کل کسی کو اس کے بدعت ہونے کا وسوسہ بھی نہیں، اسی طرح تبلیغی اوقات کو بھی بدعت کہنا صحیح نہیں۔ (دیکھئے آپ کے مسائل اور ان کا حل، ج : ۸، ص: ۲۰۲) ۔



واللہ تعالیٰ اعلم


دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند

اس موضوع سے متعلق دیگر سوالات